3

ایک محبت عدلیہ اور نواز شریف کے نام , کامران خان

کیا ہوا جو تو میرے نصیب میں نہیں تو جہاں بھی ہو میری دعائیں تیرے ساتھ ہیں کسی غلط اور برے ذہن والے کو تیرے قریب بھی نہ آنے دوں ہاں یہ دعا ہے میری اے میرے محبوب, ایک ماہ ہوا چاہتا ہے دل کچھ عجیب سی صورتحال کا شکار ہے بہرحال زندگی کے یہ موڑ کچھ اسی طرح سے گزرنے ہیں, جس کو چاہنا میری زندگی تھی آج اس کو دیکھنا بھی میرے نصیب میں نہیں, خیر آج ایک ماہ بعد ذہن سیاست کی طرف مائل ہوا ہے اور یہی میری زندگی ہے, نواز شریف عدلیہ کو کھلا چیلنج ہی نہیں کھل کر باتیں سنا رہے ہیں, نہال ہاشمی کی نااہلی گرفتاری بہت سی حقیقتیں بیان کرچکی ہے کہ حکومت کیا سے کیا ہوجائے گی, مریم باجی بھی آج گوجرانوالہ میں پنامہ ڈرامہ فسانہ کرتی رہیں, توہین عدالت کو ڈسکس کرتی رہیں, یہ زندگی ہے جو کچھ اس طرح کٹ رہی ہے کہ ہم چاہتے ہی نہیں کہ کبھی تم سے جدائی ہو, یہ اقتدار جس میں کبھی مشرف تھا اس کو بھی واپس بلاؤ یہ کہنا تھا مریم نواز کا, میں کیا سے کیا ہوگیا کبھی سوچتا ہوں کی جنرل راحیل شریف نے آخر کیوں پرویز مشرف کو ملک سے باہر جانے دیا, اب عدلیہ پر تنقید کےحوالے سے طلال چوہدری کی باری ہے دیکھنا یہ ہے کہ عدلیہ کس طرح سے نوز شریف کو قابو کرتی ہے, نواز شریف نے جو محبت کی داستان شروع کررکھی ہے آخر وہ کہاں ختم ہوگی, یاد آرہا ہے مجھے وہ وقت جب تم سے وہ آخری ملاقات ہوگی کیا وہی انکار نوازشریف کو بھی ہوگا, کیا ان کا دل بھی جلے گا, کیا یہ بھی آہیں بھریں گے, ان کی بھی نیندیں اڑیں گے یہ بھی دن رات تڑپیں گے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں