29

جنرل قمرباجوہ کا افغان دورہ – صائمہ وانی کی شہادت اور مسلم لیگ ن کی جیت ، کامران خان

ہر وقت تصور میں مدینے کی گلی ہے، یہ ورد کرتے کشمیر کی ایک اور بیٹی صائمہ وانی جام شہادت قبول کر گئی، عظیم قوم کی عظیم بیٹی جام شہادت نوش کر گئی اور ہم پاکستان میں آرام اور چین کی نیند سو رہے ہیں، ہمارے کانوں میں آج بھی بھارت کے گانے گونج رہے ہیں، لیکن اگر بات کی جائے پاک فوج کے سپہ سالار کی تو ہمیں فخر ہے کہ جنرل قمر جاوید باجوہ افغانستان میں تین ملکی فوجی سربراہ کانفرنس میں دہشت گردی کے خلاف اپنے عزم کا اظہار کرکے آئے ہیں، آرمی چیف نے پاکستان سے ہر طرح کے دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو ختم کرنے کے عزم کا اظہار کیا اور پاکستان کی جانب سے ہر طرح کی فوجی قوت کے اظہار کا عزم کیا، سلسلے چلیں تیری یادوں کے اور ہمیں خبر نہ ہو تو کسی اور کی ہو جا اور ہم بیٹھے تکتے رہیں، ہائے میرے ہمسفر اگر بات کی جائے لودھراں الیکشن میں تحریک انصاف کی شکست کی تو جدائی کے یہ سلسلے گہرے ہوتے جارہے ہیں، پاکستانی عوام نے تحریک انصاف کو مسترد کردیا ہے اورمسلم لیگ ن کے پیر اقبال شاہ کو کامیابی سے نوازا ہے، پچلے سال لودھراں میں کامیابی کے بعد جہانگیر ترین کے لیئے پنامہ فیصلے میں نااہل ہونے کے بعد اپنے بیٹے کی سیٹ ہارنے کا یہ دوسرا دھچکا بہت گہرا ہے کہ جس کی گونج اگلے الیکشنز تک سنائی دے گی، نعیم بخاری جو کہ پنامہ کیس میں عمران خان کے وکیل تھے ان کا بھی یہ کہنا ہے کہ عمران خان نے پارٹی میں خاندانی سیاست کو فروغ دے کر اپنے وزین سے روگردانی کی ہے، یہ معاملات اتنے آسان نہیں جتنے نظر آرہے ہیں کبھی نہ کبھی کسی نہ کسی موڑ پر عمران خان کو پاور پالیٹکس میں آنا بھاری پڑتا ہے، مسلم لیگ ن کے رنگ میں رنگے جانا تحریک انصاف کا خاصہ نہیں ہونا چاہیے، مگر عمران خان آج اپنے جلسے میں علی ترین کو 90 ہزار ووٹ لینے پر مبارکباد دے رہے تھے اور ایک نوجوان کی اتنی جدوجہد پر اپنی مسرت کا اظہار کررہے تھے، عمران خان نے کہا کہ وہ پاکستان میں سب سے زیادہ شکست کھانے والے کیپٹن تھے لیکن انھوں نے کبھی ہمت نہیں ہاری، عمران خان نے کہا کہ اگر میں ہمت ہار گیا تومیں نوازشریف بن جاؤں گا اس لئیے میں خوش ہوں کہ نوجوان قیادت نے کامیابی حاصل کی ہے، کراچی کے نقیب قتل کیس کی بات کی جائے تو چیف جسٹس نے راؤ انوار کی موصول ہونے والی درخواست پر ایک ہفتے کے لئیے ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کی گرفتاری روک دی ہے، آخر میں آج سے سال پہلے ہونے والے لاہور کے چئیرنگ کراس پر دھماکے کے شہداء کو شعور نیوز کی طرف سے سلام پیش کرتے ہیں اور پاکستان میں امن و سلامتی قائم رکھنے میں پولیس کے شہداء کی قربانیوں کو نزرانہء عقیدت پیش کرتے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں