179

تحریک انصاف نے پنجاب میں آج رات تک مطلوبہ ارکان کی تعداد پوری کرنے کا دعویٰ کر دیا

لاہور: پنجاب میں حکومت سازی کے لیے تحریک انصاف مطلوبہ ارکان کی تعداد حاصل کرنے میں مسلم لیگ (ن) کے مقابلے میں آگے نکل گئی تاہم دونوں جماعتیں سیاسی جوڑ توڑ میں مصروف ہیں۔
پنجاب میں حکومت سازی کے لیے کسی بھی جماعت کو 149 ارکان کی تعداد حاصل کرنا ہے، اب تک مسلم لیگ (ن) کے پاس 129 اور تحریک انصاف کے پاس 123 ارکان ہیں تاہم حال ہی میں آزاد ارکان کی بڑی تعداد نے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی ہے۔
پنجاب اسمبلی کے 4 اور قومی اسمبلی کے 2 آزاد اراکین نے بنی گالہ میں عمران خان سے ملاقات کی اور تحریک انصاف میں شمولیت کا باضابطہ اعلان کیا۔
پی ٹی آئی میں شامل ہونے والوں میں پی پی97 ملتان سے سعید اكبر نوانی، پی پی 98 سے امیر محمدحسن خیلی، پی پی 237 سے فدا حسین وٹو اور پی پی 270 سے عبدالحئی دستی شامل ہیں۔

قومی اسمبلی کے آزاد اراکین میں این اے97 سے ثناءالله مستی خیل اور این اے 166 سے غفار وٹو نے عمران خان کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی۔
چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے پارٹی میں شامل ہونے والے اراکین کو پارٹی کے مفلر پہنائے اور خوش آمدید کہا۔
پی ٹی آئی کے مرکزی ترجمان فواد چوہدری نے جیو نیوز سے بات کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ پنجاب میں حکومت سازی کے لیے ارکان اسمبلی کی تعداد 138 تک پہنچ گئی اور آج رات تک یہ تعداد 140 ہوجائے گی۔
فواد چوہدری نے کہا کہ حکومت سازی کے لیے مسلم لیگ ق کی بھی حمایت حاصل ہے اور آج رات تک 149 ارکان کی مطلوبہ تعداد حاصل کرلی جائے گی۔
ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ق کا وفد آج بنی گالہ میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سے ملاقات کرے گا جس کے دوران مرکز اور پنجاب میں حکومت سازی پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔
وفد میں چوہدری پرویز الہٰی، مونس الہٰی، کامل علی آغا اور طارق بشیر چیمہ شامل ہوں گے جب کہ ق لیگی وفد عمران خان کو مرکز اور پنجاب میں مکمل حمایت کا یقین دلائے گا۔
یاد رہے کہ مسلم لیگ ق نے بھی تحریک انصاف کی حمایت کا اعلان کر رکھا ہے جس کی صوبے میں 7 نشستیں ہیں۔
دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثنااللہ کے صوبے میں نمبر گیم پورا کرنے کے لیے آزاد ارکان سے رابطے جاری ہیں اور ان کا دعویٰ ہے کہ چند روز میں مطلوبہ ارکان کی حمایت حاصل کر لی جائے گی۔
مسلم لیگ ن کا وفد پیپلز پارٹی سے بھی آج دوبارہ مذاکرات کرے گا جس کے دوران میثاق جمہوریت کے مطابق پنجاب حکومت کے لیے پیپلز پارٹی کی حمایت طلب کی جائے گی۔
یاد رہے کہ پنجاب اسمبلی میں 29 آزاد اراکین کے علاوہ، مسلم لیگ ق کی 7 اور پیپلز پارٹی کی 6 نشستیں ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں