15

حکیم سعید اور عمران خان کی کہانی

1995 میں حکیم سعید شہید صاحب نے اپنی کتاب جاپان کہانی
میں جو لکھا آج وہ حرف بحرف سچ ثابت ہو رہا ہے انہوں نے بتایا تھا کہ عمران خان کو ملک پاکستان میں 4 کاموں کے لیے مہرہ بنا کر تیار کیا جا رہا ہے اور 20 یا 25 سال کے دروان ان کو پاکستان کا وزیر اعظم بنا کر 4 کام ان سے لیے جائیں گے پہلے وہ 4 کام آپ کو بتاتا ہوں پھر اس نے وزیر اعظم بننے کے بعد کس طرح اور کتنے کام مکمل کر لیے ہیں اور کونسا رہ گیا ہے۔
1پاکستان کی معیشت کو برباد کرنا۔۔
2 ملکی اداروں کو کفار کے زیر تسلط کرنا
3 295 سی توہین رسالت قانون کو ختم کرنا
4 اس ملک پاکستان جو کلمے کی بنیاد پر بنایا گیا ہے اس میں قادیانیوں کو مسلم قرار دلوانا اور ان کو پاکستان کے مرکزی اداروں میں جگہ دینا۔۔
1 پاکستان کی معیشت آپ سب کے سامنے ہے اس پر تبصرہ کرنے کی ضرورت نہیں پاکستان کی جی ڈی پی جو انڈیا سے 3 جنگوں اور پھر پریسلر ترمیم جو 1992 سے 2002 تک رہی پاکستان کی جی ڈی پی منفی میں نہیں گئی تھی جو اس نے ایک سال میں منفی تک پہنچا دی۔
2 پاکستان کے اداروں کو کفار کے زیر تسلط کرنا اس نے آتے ہی ایف بی آر سٹیٹ بینک آف پاکستان اور دوسرے اداروں میں آئی ایم ایف کے ملازمین کے حوالے کر دیے ایف بی آر اور سٹیٹ بینک کے چیئرمین باقر نجفی اور شبر زیدی کے ملازمین ہیں ان کا لگا کر ابتدا کی پھر آہستہ آہستہ دوسرے جگہوں پر بھی ۔۔۔
3 295 سی کا قانون ختم کرنا یہ کام سب سے مشکل ہے پاکستان میں اس کے لیے گراؤنڈ تیار کی جا رہی ہے اس نے وزیراعظم کی حلف برداری تقریب سے اس کو شروع کیا اور خاتم النبیین ٹھیک طرح سے ادا نہ کر کے اس کام کر شروعات کی پھر اس نے ایک قادیانی کو اکنامک مشیر نامزد کیا مگر عوامی دباؤ پر اس کو نہیں لگایا جا سکا پھر اس نے بجٹ تقریر میں صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کی شان اقدس میں نازیبا الفاظ کہے پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شان اقدس میں نازیبا الفاظ کہے اور پھر آسیہ ملعونہ چوڑی کو رہا کر کے مسلمانوں پر ظلم و ستم کیا دہشت گردی کے پرچے کاٹے گئے اور 93000 مسلمانوں کو گرفتار کیا گیا اور 6 مہنیے ان کو جیل میں رکھا گیا پھر شکورے قادیانی کو رہا کیا گیا اور پھر فرانس نے گستاخانہ خاکے شائع کیے اور پھر تحریک لبیک پاکستان نے احتجاج کیا تحریک سے معاہدہ کیا گیا جس کو دوبارہ آگے لے جایا گیا اور پھر معاہدے سے پہلے تحریک کے قائد کو گرفتار کر کے معاہدے کو توڑا گیا اور پھر احتجاج شروع ہوا تو تحریک پر جس طرح ظلم و ستم کیا گیا یہاں تک تحریک کو دہشت گرد بنا کر بین کیا گیا تا کہ جب 295 سی جو ختم کیا جائے تو کوئی احتجاج کرے تو اس کو دہشت کر بنا کر کچل دیا جائے مگر تحریک لبیک پاکستان کے کارکنان نے اپنے سینے پیش کرنے شروع کر دیے مگر ظلم کے آگے جھکے نہیں تب ان کو اندازہ ہوا یہ کام ہمارے گلے نہ پڑ جائے اور پھر سانحہ یتیم خانے کے بعد پورا ملک اور مذہبی سیاسی جماعتوں اور غیر سیاسی جماعتوں نے تحریک لبیک پاکستان کا ساتھ دیا تو حکومت مجبور ہو گئی ظلم و ستم روکنے پر اور ان کا منصوبہ خاک میں مل گیا اور اب یورپی یونین کی پارلمینٹ نے ایک قراداد پاس کی جس میں پاکستان کو یہ کہا گیا کہ 295 سی کو ختم کرو اب دیکھو یہ ڈونکی کنگ کیا کرتا ہے جیسا کہ میں اوپر لکھا یہ کام سب سے مشکل ہے اور ان شاءاللہ مشکل ہی رہے گا۔۔۔۔
4 پاکستان میں قادیانیوں کو مسلم قرار دینا اور ان کو سرکاری عہدوں پر تعینات کرنا۔
اس وقت موجودہ حکومت کے چھ مشیر قادیانی ہیں سماء نیوز کے اینکر ندیم ملک نے جب قادیانیوں کو اقلیت قرار دینے کے معاملے پر نور الحق قادری کو اپنے پروگرام میں بلایا تو جناب ندیم ملک نے اپنی ذہانت سے نور الحق قادری سے اگلوا لیا کہ چھ مشیروں نے اس ڈرافٹ کو پاس کروانے میں اپنا کردار ادا کیا ان میں معید یوسف شہزاد اکبر سرفہرست تھے اور جس دن عمران خان حکومت میں آیا فیصل آباد کے علاقے گھسیٹ پورہ میں قادیانیوں نے فائرنگ کر کے دو مسلمانوں کو شہید اور 12 کو زخمی کیا مگر آج کے دن تک قادیانیوں پر ایف آئی آر درج نہیں ہو سکی اور کراچی سے کشمیر تک قادیانی لابی پوری طرح ایکٹو ہے اکثر جگہوں پر انہوں نے کھلم کھلا اپنی عبادت گاہوں کو اوپن کیا اور اسلام آباد میں بہت بڑی جگہ قادیانیوں کو دی گئی ہے پاکستان میں اپنا مرکز بنانے کے لیے اور اتنی عجلت میں کرتار پور راہداری صرف قادیانیوں کے لیے تیار کر کے جھولی گئی سکھوں کا تو صرف بہانہ ہے کیونکہ کرتار پور سے 45 کلو میٹر دور انڈیا میں قادیان شہر ہے قادیانیوں کو پاکستان آنے کے لیے دہلی یا ممبئی جانا پڑتا اور پھر وہاں سے دوبئی اور دوبئی سے لاہور جو اب کرتار پور راہداری بننے سے 45 منٹ میں پاکستان اور 2 گھنٹوں میں ربوے پہنچ جاتے ہیں۔
مسلمانوں اب بھی وقت ہے اس کی حقیقت کو سمجھ جاؤ ورنہ پچھتاوئے کے سوا کچھ نہیں ہاتھ آئے گا اس تحریر کو پڑھ کر ہر مسلمان تک پہنچائیں شکریہ 🌹

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں